52

سینیٹ انتخابات کیلئے الیکشن کمیشن کا ضابطہ اخلاق جاری

اسلام آباد : الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) نے 2 اپریل کو ہونے والے سینیٹ انتخابات کے لیے ضابطہ اخلاق جاری کردیا ضابطہ اخلاق میں واضح کیا گیا کہ صدر اور چاروں صوبائی گورنرز سینیٹ انتخابات کے لیے انتخابی مہم میں شامل نہیں ہوں گے سیاسی جماعتیں ،امیدوار نظریہ پاکستان، سالمیت کیخلاف بیانات نہیں دینگے، کوئی ایسا بیان نہ دیا جائے جس کا مقصد آرمڈ فورسز، پارلیمنٹ یا عدلیہ کی تضحیک ہو الیکشن کمیشن کا کہنا ہے کہ سیاسی جماعتیں اور امیدوار کسی بھی صورت الیکشن کمیشن کو متنازع بنانے سے اجتناب کرینگے اور نہ ہی وہ کسی قسم کے کرپٹ یا غیرقانونی عمل میں ملوث نہیں ہونگے ضابطہ اخلاق میں کہا گیا ہے کہ کسی امیدوار کو جتوانے کیلئے پبلک آفس ہولڈر کی حمایت حاصل نہیں کی جائے گی، سرکاری ملازمین کسی امیدوار کی حمایت اور مخالفت سے اجتناب کریں گے صدر پاکستان سمیت چاروں صوبائی گورنرز سینیٹ انتخابات کیلئے انتخابی مہم میں شامل نہیں ہونگے، ووٹرز کے پولنگ اسٹیشن پر موبائل فون لے جانے پر پابندی ہوگی اس کے علاوہ انتخابی اخراجات کیلئے امیدوار کاغذات نامزدگی کی اسکروٹنی سے قبل بینک اکاؤنٹ کھلوانے کے پابند ہوں گے الیکشن کمیشن کی جانب سے کسی بھی امیدوار کیلئے انتخابی اخراجات کی حد 15لاکھ روپے مقرر کی گئی ہے، کامیاب امیدوار 5روز کے اندر انتخابی اخراجات آراو کو جمع کرانے کے پابند ہوں گے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں