37

اقتصادی رابطہ کمیٹی نے4000 روپے فی من گندم کی خریداری کی منظوری دے دی سندھ کو14 لاکھ میٹرک ٹن، پنجاب 35 لاکھ میٹرک ٹن اور بلوچستان کو ایک لاکھ میٹرک ٹن گندم خریداری کی اجازت دی گئی

اسلام آباد : اقتصادی رابطہ کمیٹی نے 4000 روپے فی من گندم کی خریداری کی منظوری دے دی، سندھ کو14 لاکھ میٹرک ٹن، پنجاب 35 لاکھ میٹرک ٹن اور بلوچستان کو ایک لاکھ میٹرک ٹن گندم خریداری کی اجازت دی گئی ہے۔ دنیا نیوز کے مطابق وزیرخزانہ اسحاق ڈار کی زیرصدارت اقتصادی رابطہ کمیٹی کا اجلاس ہوا۔ اجلاس میں ای سی سی نے سندھ کو 4000 روپے فی من گندم کی خریداری کی منظوری دے دی ہے، اسی طرح پنجاب میں40 کلو گندم 3900 روپے، بلوچستان میں40 کلو گندم 3900 روپے فی من خریدی جائے گی۔ای سی سی نے سندھ کو14 لاکھ روپے میٹرک ٹن، پنجاب کو35 لاکھ میٹرک ٹن، بلوچستان کو ایک لاکھ میٹرک ٹن گندم کی خریداری کی اجازت دی ہے۔ یہاں واضح رہے کہ گزشتہ برس گندم کی امدادی قیمت 2200 روپے تھی، یوں اس سال گندم کی امدادی قیمت میں 88 فیصد اضافہ کر دیا گیا۔اجلاس میں ای سی سی نے ڈریپ کو ادویات کی قیمتوں میں بھی ردوبدل کی اجازت دے دی ہے، قیمتوں میں کمی بیشی کی اجازت کو ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر گرنے کے ساتھ منسلک کیا گیا ہے، جس کے تحت تین ماہ بعد قیمتوں کا جائزہ لیا جائے گا۔اسی طرح گزشتہ روز بھی وفاقی وزیر خزانہ اور ریونیو سینیٹر محمد اسحاق ڈار کی زیر صدارت کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی (ای سی سی) کا اجلاس ہوا۔ وفاقی وزیر برائے بجلی خرم دستگیر خان، وفاقی وزیر تجارت سید نوید قمر، وفاقی وزیر برائے موسمیاتی تبدیلی سینیٹر شیری رحمان، وزیر مملکت برائے خزانہ و محصولات ڈاکٹر عائشہ غوث پاشا، وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے خزانہ طارق باجوہ، وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے ریونیو طارق محمود پاشا، وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے حکومتی اقدامات محمد جہانزیب خان، وزیر اعظم کے کوآرڈینیٹر برائے معیشت بلال اظہر کیانی، وفاقی سیکرٹریز اور دیگر سینئر افسران نے اجلاس میں شرکت کی۔ای سی سی نے وزارت توانائی (پٹرولیم ڈویژن) کی سمریوں پر غور کیا اور بھل سیداں ڈویلپمنٹ اینڈ پروڈکشن لیز (D&PL) کی تجدید میں توسیع کی منظوری دی جس میں ضلع اٹک، پنجاب میں واقع 16.41 مربع کلومیٹر کے رقبے پر محیط ہے۔ یکم جنوری 2022 سے 10 اپریل 2024 تک او جی ڈی سی ایل کے حق میں منظوری دیدی۔ فیلڈ ڈویلپمنٹ پلان (ایف ڈی پی ) کی منظوری اور 8 جون 2022 سے پانچ سال کی مدت کے لئے فاضل ڈسکوری (مبارک بلاک) پر ڈیولپمنٹ اینڈ پروڈکشن لیز (D&PL) کی منظوری دیدی۔پاریوالی ڈویلپمنٹ اینڈ پروڈکشن لیز فیلڈ کو پانچ سال کی تجدید کی گرانٹ کی منظوری دی جس کا رقبہ 121.95 مربع فٹ کی منظوری دیدی۔ منوال ڈویلپمنٹ پر پانچ سال کی تجدید کی گرانٹ کی منظوری دی جو کہ ضلع چکوال، پنجاب میں واقع 18.85 مربع کلومیٹر کے رقبے پر محیط ہے۔ ای سی سی نے درج ذیل تکنیکی سپلیمنٹری گرانٹس کی منظوری دی۔ 31 جنوری 2023 کو پشاور میں پیش آنے والے دہشت گردی کے واقعہ میں شہداء اور زخمیوں کو مالی امداد کے طور پر رقم کی تقسیم کیلئے وزارت داخلہ کی جانب سے 284.5 ملین روپے کی منظوری دی گئی جس میں 84 افراد شہید اور 233 زخمی ہوئے۔وزارت قومی صحت کے حق میں 67 ملین مالی سال 2022-23 کے لئے “پانڈیمک ریسپانس ایفیکٹیونس ان پاکستان اقدام کے تحت آئی ڈی اے قرض کے استعمال کیلئے عالمی بینک کی جانب سے 0.400 ملین ڈالر ، رواں مالی سال 2022-23 میں ایف ایس سی کو درپیش کمی کو پورا کرنے کے لیے وفاقی شرعی عدالت کے لیے وزارت قانون و انصاف کے حق میں 61 ملین روپے، بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام (بی آئی ایس پی) نشوونما پراجیکٹ کے لئے وزارت غربت کے خاتمے اور سماجی تحفظ کے حق میں 500 ملین روپے کی منظوری دیدی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں