16

سيبس یونیورسٹی جامشورو میں ورک پلیس ہراسمنٹ ایکٹ کے بارے میں آگاہی سیمینار کا اہتمام

جامشورو میں وومين هراسمينٹ کمیٹی کی جانب سے وفاقی محتسب برائے تحفظ خواتین کو ہراساں کرنے کے خلاف حکومت پاکستان کے تعاون سے (ورک پلیس ہراسمنٹ ایکٹ) کے بارے میں آگاہی سیمینار کا اہتمام کیا گيا کام کی جگہ پر خواتین کو ہراساں کرنے کے خلاف وفاقی محتسب کے تحفظ کے لیے سندھ کی ریجنل سربراہ صبیقہ شاہ نے کہا کہ پاکستانی خواتین کو کام کے لیے باہر جانا چاہیے کیونکہ موجودہ حالات میں ایک آمدنی پر انحصار کرنا بہت مشکل ہو گیا ہے اور اخراجات پورے کرنا تقریباً ناممکن ہے۔ انہوں نے کہا کہ وفاقی محتسب ایک آزاد عدالت کے طور پر کام کرتا ہے اور تمام جنسوں کے مقدمات کو نمٹاتا ہے اور رپورٹ داخل کرنے کے نوے دنوں کے اندر معاملہ حل کرتا ہے۔ صبیقہ شاہ نے کہا کہ اگر کوئی شخص کسی بھی ہراساں کرنے کے واقعے میں قصوروار پایا جاتا ہے تو اسے قانون کے مطابق نتائج کا سامنا کرنا پڑتا ہے اور کسی خاص مجرم کو سزا دینا پورے مسئلے کا حل نہیں ہے بلکہ شہریوں کے طویل المدتی تحفظ کے لیے مجموعی کلچر کو تبدیل کرنا ہوگا حاضرین سے خطاب کرتے ہوئے، اسسٹنٹ رجسٹرار وفاقی محتسب سندھ افيفه سمو اور اسسٹنٹ لا آفیسر سندھ محمد عالیان نے کہا کہ پاکستان خواتین کے امن و سلامتی کے انڈیکس میں چوتھا بدترین ملک میں ہے، %82 خواتین کو پبلک ٹرانسپورٹ پر ہراساں کیا جاتا ہے لیکن 80% خواتین کا دعویٰ ہے کہ پولیس نے ان کی شکایت پر کچھ نہیں کیا۔ انہوں نے کہا کہ وفاقی محتسب، منصفانہ، دیانتداری، شفافیت، آزادی، جلد بازی، رازداری، رسائی، غیر رسمی اور غیر جانبداری پر یقین رکھتا ہے۔ مقررین نے مزید کہا کہ کسی بھی وفاقی حکومت کے ادارے میں ‘بد نظمی’ کے بارے میں شکایات کی آزادانہ تحقیقات کر کے شکایات کو دور کيا جاتا ہے اور اداره عوام کو ریلیف فراہم کرتا ہے اور چیزوں کو درست کرنے کے لیے کام کرتا ہے اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے سيبس یونیورسٹی جامشورو کی وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر ارابیلا بھٹو نے آگاہی سیمینار کے انعقاد پر مقررين کا شکریہ ادا کیا اور یونیورسٹی کے ہر طالب علم اور ملازم کو کیمپس کے احاطے میں آزاد محسوس کرنے اور جامع کو ہراساں کرنے سے پاک زون بنانے کی یقین دہانی کرائی سیمینار میں طلباء، فیکلٹی ممبران اور ملازمین کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں